لو جہاد معاملہ

لو جہاد قانون کو چیلنج کرنے والی عرضداشت کو سپریم کورٹ نے سماعت کے لیئے قبول کرلیا جمعیۃ علماء بطور مداخلت کار عدالتی کارروائی میں حصہ لیگی،...

لو جہاد قانون کو چیلنج کرنے والی عرضداشت کو سپریم کورٹ نے سماعت کے لیئے قبول کرلیا

جمعیۃ علماء بطور مداخلت کار عدالتی کارروائی میں حصہ لیگی، گلزار اعظمی

مبئی 6 جنوری
سپریم کورٹ آف انڈیا نے آج یہاں لوجہاد قانون کو چیلنج کرنے والی عرضداشت کو سماعت کے لیئے قبول کرتے ہوئے مرکزی حکومت کو نوٹس جاری کیا ہے، حالانکہ عدالت نے ا س پر اسٹے دینے سے انکار کردیا۔
چیف جسٹس آف انڈیا کی سربراہی والی تین رکنی بینچ نے اتر پردیش اور اتراکھنڈ ریاستوں کیجانب سے پاس کیئے گئے قوانین اور آرڈیننس کے خلاف داخل عرضداشت کو سماعت کے لیئے قبول تو کرلیا لیکن اسٹے دینے سے انکار کردیا۔
سٹیزن فار جسٹس اینڈ پیس نامی آرگنائزیشن و دیگر کی جانب سے داخل کردہ اپیلوں پر سماعت کرتے ہوئے عدالت  مرکزی حکومت اور ریاستی حکومتوں کو چار ہفتوں کے اندر جواب داخل کرنے کا حکم دیتے ہوئے عرضداشتوں کو سماعت کے لیئے منطور کرلیا۔
اسی درمیان جمعیۃ علماء ہند نے سپریم کورٹ میں مداخلت کار کی درخواست داخل کرتے ہوئے اس معاملے میں مداخلت کرنے کی عدالت سے اجازت طلب کی ہے۔
ایڈوکیٹ آن ریکارڈ اعجاز مقبول نے صدر جمعیۃ علماء ہند حضرت مولانا سید ارشد مدنی کی ہدایت پر جمعیۃ علماء قانونی امداد کمیٹی کے سربراہ گلزار اعظمی کی جانب سے پٹیشن داخل کیا ہے جس میں لکھا ہیکہ ”غیر قانونی تبدیلی مذہب مانع آرڈیننس 2020 کو اتر پردیش حکومت نے منظور ی دے دی ہے جبکہ اتر کھنڈ حکومت نے فریڈم آف ریلجن نامی قانون کو منظوری دی ہے ان قوانین کو بنانے کا مقصد ہندو اور مسلمان کے درمیان ہونے والی شادیوں کو روکنا ہے جو آئین ہند میں دی گئی مذہبی آزادی کے خلاف۔
عرضداشت میں مزید لکھا گیاہیکہ ان قوانین کی وجہ سے مذہبی اور ذاتی آزادی پر روک لگانے کی کوشش کی گئی ہے جو غیر آئینی ہے لہذا عدالت کو مداخلت کررکے ریاستوں کو ایسے قوانین بنانے سے روکنا چاہئے نیز جن ریاستوں نے ایسے قوانین بنائے ہیں انہیں ختم کردیناچاہئے۔
عرضداشت میں لکھا گیا ہیکہ اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی ادیتیہ ناتھ نے خودا علان کیا ہے کہ وہ لو جہاد کو روکنے کے لیئے غیر قانونی تبدیلی مذہب مانع آرڈیننس 2020 بنایا  گیاہے۔
سپریم کورٹ کی جانب سے لہو جہاد پر قانون بنانے والی ریاستوں اور مرکز کو جاری کی گئی نوٹس کا جواب ملنے کے بعد سپریم کورٹ میں اس مقدمہ کی سماعت عمل میں آئے گی جس کے دوران جمعیۃ علماء کی مداخلت کار کی درخواست پر فیصلہ ہوگا۔

COMMENTS

loading...
Name

Agra Article Bareilly Current Affairs DVNA Exclusive Hadees Hindi International Hindi National Hindi News Hindi Uttar Pradesh Home Interview Jalsa Madarsa News muhammad-saw Muslim Story National Politics Ramadan Slider Trending Topic Urdu News Uttar Pradesh Uttrakhand World News
false
ltr
item
TIMES OF MUSLIM: لو جہاد معاملہ
لو جہاد معاملہ
https://1.bp.blogspot.com/-VSI-PiScqqs/X_XzSTrHieI/AAAAAAAAnYs/m_b7N0GnYhIJTWb7pqxahTuQI1u8_AwvACLcBGAsYHQ/s0/download.jpg
https://1.bp.blogspot.com/-VSI-PiScqqs/X_XzSTrHieI/AAAAAAAAnYs/m_b7N0GnYhIJTWb7pqxahTuQI1u8_AwvACLcBGAsYHQ/s72-c/download.jpg
TIMES OF MUSLIM
http://www.timesofmuslim.com/2021/01/blog-post_358.html
http://www.timesofmuslim.com/
http://www.timesofmuslim.com/
http://www.timesofmuslim.com/2021/01/blog-post_358.html
true
669698634209089970
UTF-8
Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS CONTENT IS PREMIUM Please share to unlock Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy