آگرہ کی ادبی تاریخ کا ایک نام : افتخار امام صدیقی

           عاشق حسین صدیقی وارثی ۵۸۸۱ء میں اکبرآباد میں پیدا ہوئے۔مقبولیت سیماب اکبرآبادی سے حاصل ہوئی۔مرزا داغ ؔ سے اصلاح و مشورہ سخن کا آغ...

           عاشق حسین صدیقی وارثی ۵۸۸۱ء میں اکبرآباد میں پیدا ہوئے۔مقبولیت سیماب اکبرآبادی سے حاصل ہوئی۔مرزا داغ ؔ سے اصلاح و مشورہ سخن کا آغاز ہوا اور بہت جلد بر صغیر کے مطلع ادب پر سیماب اکبرآبادی بن کر جگمگاتے رہے اور اکبرآباد میں قصرالادب کی بنیاد ڈالی۔جس کے زیر اہتمام متعدد ہفتہ وار،سہ روزہ اور ماہانہ ادبی اور صحافتی اشاعت کا انتظام کیا گیا۔ان میں ثریا،مرصع،پیمانہ،کنول اور ایشیا ء  خاص ہیں۔اور یہ حقیقت ہے کہ سب سے زیادہ اہم اور یادگار ماہنامہ ”شاعر“ ہے۔یہ رسالہ ۵۳۹۱ء میں اکبرآباد سے پندرہ روزہ رسالہ کی صورت میں شائع ہوااوربہت جلد پندرہ روزہ سے ماہنامہ ہو گیا۔ماہنامہ شاعر تقسیم ہند تک آگرے سے نکلتا رہا۔۷۴۹۱ء میں جب ہندوستان انگریزوں کی غلامی سے آزاد ہوا۔اور ایک نیا ملک پاکستان بنا تو آگرہ جیسے خالی ہونے لگا۔لوگ اپنا گھر مکان چھوڑکر جانے پر مجبور ہو گئے۔ایسے میں سیماب ؔ اکبرآبادی اد ارہ قصر الا دب جو تیس سال سے آگرہ میں آباد تھا یہی نہیں بلکہ  اپنا پورا کنبہ چھوڑکر ۶۱ اگست ۸۴۹۱ء کو پاکستان چلے گئے۔ یہ سچ ہے کہ  بٹوارہ ایک پوری درد بھری داستان ہے۔اس داستان کا ذکرتو یہاں ممکن نہیں ہے۔اوران کا پورا کنبہ آگرہ کے ساتھ اپنا سب کچھ چھوڑکر بمبئی چلا گیا۔

                                سیماب اکبرآبادی کے صاحبزادے اعجاز صدیقی کی زیر سرپرستی شا عر شائع ہوتا رہا۔سیماب ؔاکبرآبادی صف اول کے ان شاعروں میں ہیں جن میں اصغر ؔ،بیخود ؔ،سائل ِ،یگانہ ؔ،فانی ؔبدایونی،حسرت ؔ موہانی،اور جوشؔ ملیح آبادی کے نام قابل ذکر ہیں۔

                            علامہ سیماب ؔاکبرآبادی کے پوتے افتخار امام صدیقی ۶۱ دسمبر ۷۴۹۱ء کو نائی کی منڈی آگرہ میں پیدا ہوئے۔شاعری کا ذوق وراثت میں ہی ملا تھا۔اس لئے یہ کہا جائے تو بیجا نہ ہوگا کہ وہ شاعر ہی پیدا ہوئے تھے۔انکے بچپن کے دو شعر دیکھیئے   ؎ 

                               ابھی  پڑھنا ہے بائسکوپ جاکر کیا کرے  کوئی 

                               کہیں آیا  کرے  کوئی  کہیں جایا  کرے کوئی 

                                 یہ  زندگی   ہے یا رب یا   موت  کی علامت 

                                ہوتا   ہے    روز  پیدا     انقلا ب      تازہ 

  افتخار امام صدیقی ۵۷۹۱ء میں بڑودہ میں ہوئے مشاعرہ میں پہلی بار شامل ہوئے۔اس کے بعد سلسلہ آگے بڑھتا رہا۔اور ہندوستان اور بیرون ممالک میں ہونے والے مشاعروں میں مدعو کیے جاتے رہے۔افتخار امام صدیقی کی لکھی ہوئی غزلوں کو چترا سنگھ،پنکج اداس،چندن داس،سدھا ملہوترہاور دیگر گلوکاروں نے گائیں۔

   


                  ۱۱ مارچ ۲۰۰۲ء کا دن آپکے لئے بہتر ثابت نہ ہوا اور کٹنی،مدھیہ پردیش میں ایک ٹرین حادثے میں زخمی ہوگئے۔

یہیں سے مشاعرے کا سلسلہ موقوف ہو گیا۔اعجاز صدیقی کے انتقال کے بعد شاعر کی ذمہ داری افتخار امام نے سنبھالی۔اور نئے نئے موضوعات پر خاص نمبر شائع کئے جن میں خلیل الرحمان اعظمی نمبر،نثری نظم اور آزاد نظم نمبر،اقبال ؔ نمبر،بیکل ؔ اتساہی،ہم عصر اردو ادب نمبر (جلد اول) اب یہ نمبر کمیاب ہی نہیں نایاب ہیں۔آپنے اردو کی نئی بستی پر خصوصی شمارے شائع کرکے ادبی کتب و رسائل کے لئے بڑا کام کیا۔نئی بستیوں کے قلم کاروں کو ہندوستان اور پاکستان میں متعارف کروانے میں اہم رول ادا کیا۔

                افتخارامام صدیقی نے  ہر سال ۸ مارچ عالمی یوم خواتین کے موقع پر کسی نہ کسی مشہور قلم کار خاتون پر گوشہ شائع کرنے کی روایت کو آگے بڑھایا۔اس سلسلے میں بعض گوشے بہت مشہور ہوئے۔جیسے ترنم ریاض (ہندوستان) پروین شیر (کنیڈا) صوفیہ انجم تاج (امریکہ) سلطانہ مہر (لندن) شکیلہ رفیق (کینڈا) طاہرہ اقبال (پاکستان) شاہین مفتی (پاکستان)عزرا پروین (ہندوستان)وغیرہ 

                    رسالہ شاعر کا ہر شمارہ خصوصی شمارہ ہوتا ہے۔ساتھ ہی ساتھ کسی نہ کسی قلم کاروں کے گوشے پر مشتمل گوشوں میں خصوصی طور پر قلمکاروں سے انٹرویو کے ذریعے قارئین کو اسکے فن اور شخصیت سے متعارف کروایا جاتا ہے۔ افتخار امام صدیقی نے ۰۰۱ کے قریب قلم کاروں سے تحریری انڑویو لئے تھے۔یہ اپنے آپ میں ایک ریکارڈ ہے۔

                           افتخار امام صدیقی کے شعری مجموعے چاند غزل،یہ شاعری نہیں ہے قابل ذکر ہیں۔حمد و نعت کے مجموئے یا اللہ،رب العالمین،اللہ ہمہ رحمت ہی رحمت،آقا وغیرہ خاص ہیں۔آپنے امریکہ،کنیڈا،لندن،پاکستان اور خلیجی ممالک کے سفر بھی کئے تھے  

                        افتخار امام صدیقی کوانکی ادبی خدمات پر مدھیہ پردیش اردو اکادمی،مہا راشٹر اردو اکادمی اور دیگر سماجی تیظیموں کی طرف سے انعامات مل چکے تھے۔

                       افتخار امام صدیقی کی جائے پیدائش آگرہ ہے۔آگرہ کے ہی صوفی شاعر علامہ میکش اکبرآبادی کے نام سے منسوب تییسواں میکش ایوارڈ ۸۲ اپریل ۳۱۰۲ء کو افتخار امام صدیقی کو دیا گیا۔مگر آپ علالت کی وجہ سے آگرہ ایوارڈ تقریب میں تشریف نہ لا سکے تھے۔اس موقع پر آپکی بھتیجی محترمہ حنا صا حبہ نے آگرہ آکر ایوارڈحاصل کیا تھا۔

                       دو روزہ بین الاقوامی سیمینا ر ۲۱ و ۳۱ جنوری ۹۱۰۲ ء  سیماب اکبرآبادی فن اور شخصیت پر آگرہ کے تاریخی کالج سینٹ جانس میں منعقد ہوا۔سیمینار کے کنوینر پروفیسر سید شفیق احمد اشرفی،صدر شعبۂ اردو خواجہ معین الدین چشتی اردو عربی فارسی،یونیورسٹی،لکھنو زیر اہتمام فخرالدین علی احمد میموریل کمیٹی،لکھنو نے کیا۔بین الا قوامی سیمینار سیماب اکبرآبادی فن و شخصیت کامیاب رہا۔جب یہ خبر افتخار امام صدیقی کو ملی تو انکا ٹیلی فون آیا۔ کہنے لگے نسرین ہمیں معلوم ہوا ہے کہ آگرہ میں سیماب اکبرآبادی پر بڑا سیمینا رہوا ہے۔میں بہت 


خوش ہوں ہماری دلی خواہش ہے کہ آگرہ میں ا ن کے نام پرایک بڑا سیمینا ر ہو۔آگرہ سے بڑی یادیں جڑی ہوئی ہیں۔ بہت دیر تک آگرہ

   کے حوالے سے باتیں  ہوتی رہیں۔اس کے بعد کئی بار فون آئے کہ بہت جلد بڑا سیمینا ر کرانا چاہتا ہوں۔میری بات بہت لوگوں سے ہو گئی ہے۔تم کو وہاں کا پورا کام سنبھالنا ہو گا۔اشرفی صاحب کو بھی ذمہ داری دونگا۔

                          آخر یہ خواہش انکی پوری نہ ہو سکی اور معروف شاعر و ادیب شاعر کے مدیر افتخار امام صدیقی اس دنیا سے رخصت ہوگئے۔اور انکی جائے پیدائش آگرہ دادا سیماب اکبرآبادی کا شہر آگرہ ایک بار پھر اداس ہو گیا۔اور آگرہ کی ادبی تاریخ کا ایک روشن نام اپنے مالک حقیقی سے جا ملا۔اللہ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرمائے۔آمین 

                                    مدت  کے بعد  ہوتے ہیں پیدا  کہیں وہ  لوگ 

                                   مٹتے  نہیں   ہیں  دہر سے   جن کے  نشاں کبھی 

                                    

                             
        ڈاکٹر  نسرین بیگم  (علیگ) 

                                     ایسو ایٹ پروفیسر و صدر شعبۂ اردو 

                               بیکنٹھی  دیوی گرلس  ہی جی کالج،آگرہ

                             

      


COMMENTS

loading...
Name

Agra Article Bareilly Current Affairs DVNA Exclusive Hadees Hindi International Hindi National Hindi News Hindi Uttar Pradesh Home Interview Jalsa Madarsa News muhammad-saw Muslim Story National Politics Ramadan Slider Trending Topic Urdu News Uttar Pradesh Uttrakhand World News
false
ltr
item
TIMES OF MUSLIM: آگرہ کی ادبی تاریخ کا ایک نام : افتخار امام صدیقی
آگرہ کی ادبی تاریخ کا ایک نام : افتخار امام صدیقی
https://1.bp.blogspot.com/-ZY9zEXpd1iE/YJU58H8IV_I/AAAAAAAArVw/QdQXKHb8JqwvbckjVXI4Edn-m9XYB0acACLcBGAsYHQ/s320/20210505_105229.jpg
https://1.bp.blogspot.com/-ZY9zEXpd1iE/YJU58H8IV_I/AAAAAAAArVw/QdQXKHb8JqwvbckjVXI4Edn-m9XYB0acACLcBGAsYHQ/s72-c/20210505_105229.jpg
TIMES OF MUSLIM
https://www.timesofmuslim.com/2021/05/blog-post_436.html
https://www.timesofmuslim.com/
http://www.timesofmuslim.com/
http://www.timesofmuslim.com/2021/05/blog-post_436.html
true
669698634209089970
UTF-8
Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS CONTENT IS PREMIUM Please share to unlock Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy